Apnipoetry.com | Best Urdu Poetry in Urdu & Roman Urdu Scripts.

جب کبھی دل پہ اختیار ہُوا

جب کبھی دل پہ اختیار ہُوا
ہم بھی تجھ کو بُھلا کے دیکھیں گے

Jab Kabhi Dil Pe Ikhtiyaar Huwa
Hum Bhi Tujh Ko Bhula Ke Daikhein Ge

سرِ محفل کچھ اِس انداز سے لُوٹا گیا ہوں میں

سرِ محفل کچھ اِس انداز سے لُوٹا گیا ہوں میں
ہجومِ عام میں بھی میری تنہائی نہیں جاتی

Sar-e-Mehfil Kuch Iss Andaz Se Lootta Gaya Hoon Main
Hajoom-e-Aam Mein Bhi Meri Tanhai Nahi Jati

تھکن نہیں ہے کٹھن راستوں پہ چلنے کی

تھکن نہیں ہے کٹھن راستوں پہ چلنے کی
بچھڑنے والوں کے دکھ نے بہت نڈھال کیا

Thakan Nahi Hai Kathan Rastoon Pe Chalney Ki
Bicherrney Waloon Ke Dukh Ne Bohat Nidhaal Kiya

کتنے جگنو اِس خواہش میں میرے ساتھ چلے

کتنے جگنو اِس خواہش میں میرے ساتھ چلے
کوئی راستہ تو تیرے گھر کو بھی جاتا ہوگا

Kitney Jugnu Iss Khawahish Mein Mere Sath Chaley
Koi Rasta To Tere Ghar Ko Bhi Jata Ho Ga

اُس کی آنکھوں کو کبھی غور سے دیکھاہے فرازؔ

اُس کی آنکھوں کو کبھی غور سے دیکھاہے فرازؔ
رونے والوں کی طرح جاگنے والوں جیسی

Uss Ki Aankhoon Ko Kabhi Ghaur Se Daikha Hai FARAZ
Roney Waloon Ki Tarah Jagney Waloon Jaisi

زمانے سے الجھنا بھی اچھا نہیں مگر صابرؔ

زمانے سے الجھنا بھی اچھا نہیں مگر صابرؔ
یہاں حد سے زیادہ بھی شرافت مار دیتی ہے

Zamaney Se Ulajhna Bhi Acha Nahi Magar SABIR
Yahan Had Se Zayada Bhi Sharafat Maar Deti Hai

پہلے کاٹ لیجیےاک چِلہ وفا کا

پہلے کاٹ لیجیےاک چِلہ وفا کا
پِھر شوق سے اُلفت کی تبلیغ کیجیے

Pehley Kaatt Lijiye Ek Chilla Wafa Ka
Phir Shauq Se Ulfat Ki Tableegh Kijiye

دلوں میں فرق آ جائے تو اتنا یاد رکھنا تم

دلوں میں فرق آ جائے تو اتنا یاد رکھنا تم
دلیلیں، واسطے اور فلسفے سب بیکار جاتے ہیں

Diloon Mein Farq Aa Jaye To Itna Yad Rakhna Tum
Daleelein, Wastey Aur Falsafey Sab Bekar Jatey Hein

چپ چاپ اپنی آگ میں جلتے رہو فراز

چپ چاپ اپنی آگ میں جلتے رہو فراز
دنیا تو عرضِ حال سے بے آبرو کرے

Chup Chap Apni Aag Mein Jaltey Raho Faraz
Dunya To Arz-e-Haal Se Be Aabru Karey

محبت بندگی ہے اس میں تن کا قرب مت مانگو

محبت بندگی ہے اس میں تن کا قرب مت مانگو
کہ جس کو چھو لیا جائے، اسے پوجا نہیں کرتے

Muhabbat Bandagi Hai, Iss Mein Tan Ka Qurab Mat Maango
K Jiss Ko Choo Liya Jaye Ussey Pooja Nahi Kartey

سنگِ مر مر سے تراشا ہوا یہ شوخ بدن

سنگِ مر مر سے تراشا ہوا یہ شوخ بدن
اِتنا دلکش ہے کہ اپنانے کو جی چاہتا ہے
سرخ ہونٹوں پہ تھرکتی ہے یہ رنگین شراب
جسے پی کر بہک جانے کو جی چاہتا ہے

Sang-e-Mar Mar Se Tarasha Huwa Ye Shokh Badan
Itna Dilkash Hai K Apnaney Ko Ji Chahta Hai
Surkh Hontoon Pe Tharakti Hai Ye Rangeen Sharab
Jissey Pee Kar Behak Janey Ko Jee Chahta Hai