کمالِ ضبط کو میں خود بھی تو آزماؤں گی

کمالِ ضبط کو میں خود بھی تو آزماؤں گی

میں اپنے ہاتھ سے اُس کی دلہن سجاؤں گی

سپرد کر کےاُسے چاندنی کے ہاتھوں میں

میں اپنے گھر کے اندھیروں میں لوٹ آؤں گی

بدن کے کرب کو وہ بھی سمجھ نہ پائے گا

میں دل میں روؤں گی آنکھوں میں مسکراؤں گی

وہ کیا گیا کہ رفاقت کے سارے لطف گئے

میں کس سے روٹھ سکوں گی کسے مناؤں گی

وہ ایک رشتہِ بے نام بھی نہیں لیکن

میں اب بھی اُس کے اشاروں پہ سر جھکاؤں گی

بچھا دیا تھا گلابوں کے ساتھ اپنا وجود

وہ سو کے اُٹھے تو خوابوں کی راکھ اُٹھاؤں گی

اب اُس کا فن تو کسی اور سے منصوب ہوا

میں کس کی نظم اکیلے میں گنگناؤں گی

جواز ڈھونڈ رہا تھا نئی محبت کا

وہ کہہ رہا تھا کہ میں اُس کو بھول جاؤں گی

سماعتوں میں گھنے جنگلوں کی سانسیں ہیں

میں اب کبھی تیری آواز سُن نہ پاؤں گی

Kamaal-e-Zabt Ko Main Khud Bhi To Aazmaoon Gi

Main Apney Haath Se Us Ki Dulhan Sajaoon Gi

Supurd Kar K Use Chaandni K Hathoon Mein

Main Apney Ghar K Andheroon Ko Laut Aaoon Gi

Badan K Karb Ko Wo Bhi Samajh Na Paye Ga

Main Dil Mein Roun Gi Aankhon Main Muskuraoon Gi

Woh Kya Gaya K Rafaqat K Sarey Lutf Gaye

Main Kis Se Rooth Sakoon Gi Kisey Manaoon Gi

Wo Aik Rishtaa-e-Benaam Bhi Nahi Laikin

Main Ab Bhi Us Ke Ishaaron Pe Sar Jhukhaoon Gi

Bichaa Diya Tha Gulaboon K Saath Apna Wajood

Wo So Ke Uthey To Khwaboon Ki Raakh Uthaoon Gi

Ab Us Ka Fann To Kisi Aur Se Mansoob Huwa

Main Kis Ki Nazm Akeley Mein Gungunaoon Gi

Javaz Dhoondh Raha Thaa Nayi Muhabbat Ka

Wo Keh Raha Tha K Main Uss Ko Bhool Jaoon Gi

Samaatoon Mein Ghanay Jangaloon Ki Saansein Hein

Main Ab Kabhi Teri Awaz Sun Na Paoon Gi